John elia poetry in urdu 2 line text

Explore the enchanting world of John Elia’s Urdu poetry in this post, delving into the life, influences, and distinctive style that define his work. Uncover the recurring themes and intellectual depth that make Elia’s verses resonate across generations. From his mastery of metaphors to the enduring impact on Urdu literature, this summary encapsulates the timeless elegance of John Elia’s poetry, inviting readers on a profound journey of introspection and understanding.

جو گزاری نہ جا سکی ہم سے 

ہم نے وہ زندگی گزاری ہے 

John elia poetry in urdu   

میں بھی بہت عجیب ہوں اتنا عجیب ہوں کہ بس 

خود کو تباہ کر لیا اور ملال بھی نہیں 

John elia poetry in urdu  

یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا 

ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا 

John elia poetry in urdu

 

بہت نزدیک آتی جا رہی ہو 

بچھڑنے کا ارادہ کر لیا کیا 

  

کون اس گھر کی دیکھ بھال کرے 

روز اک چیز ٹوٹ جاتی ہے 

John elia poetry in urdu  

کیسے کہیں کہ تجھ کو بھی ہم سے ہے واسطہ کوئی 

تو نے تو ہم سے آج تک کوئی گلہ نہیں کیا 

John elia poetry in urdu

علاج یہ ہے کہ مجبور کر دیا جاؤں 

وگرنہ یوں تو کسی کی نہیں سنی میں نے 

John elia poetry in urdu   

اس گلی نے یہ سن کے صبر کیا 

جانے والے یہاں کے تھے ہی نہیں 

John elia poetry in urdu

 

کتنی دل کش ہو تم کتنا دلجو ہوں میں 

کیا ستم ہے کہ ہم لوگ مر جائیں گے 

John elia poetry in urdu

کیا کہا عشق جاودانی ہے! 

آخری بار مل رہی ہو کیا 

John elia poetry in urdu

میری بانہوں میں بہکنے کی سزا بھی سن لےا

اب بہت دیر میں آزاد کروں گا تجھ کو

John elia  

ہر شخص سے بے نیاز ہو جا 

پھر سب سے یہ کہہ کہ میں خدا ہوں 

John elia  

آج بہت دن بعد میں اپنے کمرے تک آ نکلا تھا 

جوں ہی دروازہ کھولا ہے اس کی خوشبو آئی ہے 

John elia     

یہ وار کر گیا ہے پہلو سے کون مجھ پر 

تھا میں ہی دائیں بائیں اور میں ہی درمیاں تھا 

John elia  

حاصل کن ہے یہ جہان خراب 

یہی ممکن تھا اتنی عجلت میں 

John elia  

ساری گلی سنسان پڑی تھی باد فنا کے پہرے میں 

ہجر کے دالان اور آنگن میں بس اک سایہ زندہ تھا 

John elia   

اک عجب آمد و شد ہے کہ نہ ماضی ہے نہ حال 

جون برپا کئی نسلوں کا سفر ہے مجھ میں 

 

حملہ ہے چار سو در و دیوار شہر کا 

سب جنگلوں کو شہر کے اندر سمیٹ لو 

John elia

1 COMMENT

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here