Romantic poetry in urdu 2 lines

<

زندگی خواب دیکھتی ہے مگر زندگی زندگی

ہے خواب نہ

ابھی سے پاؤں کے چھالے نہ دیکھو ابھی یارو سفر کی ابتدا ہے

Romantic poetry
2 lines romantic poetry

شکوہ کوئی دریا کی روانی سے نہیں ہے

رشتہ ہی مری پیاس کا پانی سے نہیں ہے

شدید پیاس تھی پھر بھی چھوا نہ پانی کو

میں دیکھتا رہا دریا تری روانی کو

ٹھہری ٹھہری سی طبیعت میں روانی آئی

آج پھر یاد محبت کی کہانی آئی

پتھر کے جگر والو غم میں وہ روانی ہے

خود راہ بنا لے گا بہتا ہوا پانی ہے

زندگی زور ہے روانی کا

کیا تھمے گا بہاؤ پانی کا

روانی میں نظر آتا ہے جو بھی

اسے تسلیم کر لیتے ہیں پانی

بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں

کچھ خواب مرے عین جوانی میں مرے ہیں

آج کا جھگڑا آج چکا

کل کی باتیں کل پر ٹال

میرے اشکوں کی روانی کو روانی تو کہو

خیر تم خون نہ سمجھو اسے پانی تو کہو

سچ کے سودے میں نہ پڑنا کہ خسارا ہوگا

جو ہوا حال ہمارا سو تمہارا ہوگا

کشتیٔ مے کو حکم روانی بھی بھیج دو

جب آگ بھیج دی ہے تو پانی بھی بھیج دو

دل سے اٹھتا ہے صبح و شام دھواں

کوئی رہتا ہے اس مکاں میں ابھی

کسی نے راہ کا پتھر ہمیں کو ٹھہرایا

یہ اور بات کہ پھر آئینہ ہمیں ٹھہرے

میں اپنے آپ میں گہرا اتر گیا شاید

مرے سفر سے الگ ہو گئی روانی مری

تالاب تو برسات میں ہو جاتے ہیں کم ظرف

باہر کبھی آپے سے سمندر نہیں ہوتا

مجھ میں ہے یہی عیب کہ اوروں کی طرح میں

چہرے پہ کبھی دوسرا چہرا نہیں رکھتا

ٹھہر گئی ہے طبیعت اسے روانی دے
زمین پیاس سے مرنے لگی ہے پانی دے

ہمارے تن پہ کوئی قیمتی قبا نہ سہی
غزل کو اپنی مگر خوش لباس رکھتے ہیں

مری میلی ہتھیلی پر تو بچپن سے
غریبی کا کھرا سونا چمکتا ہے

مزا ہے عہد جوانی میں سر پٹکنے کا
لہو میں پھر یہ روانی رہے رہے نہ رہے

فطرت کے تقاضے کبھی بدلے نہیں جاتے
خوشبو ہے اگر وہ تو بکھرنا ہی پڑے گا

مجھے یہ زعم کہ میں حسن کا مصور ہوں
انہیں یہ ناز کہ تصویر تو ہماری ہے

اک دن وہ میرے عیب گنانے لگا فراغؔ
جب خود ہی تھک گیا تو مجھے سوچنا پڑا

تیری تابش سے روشن ہیں گل بھی اور ویرانے بھی
کیا تو بھی اس ہنستی گاتی دنیا کا مزدور ہے چاند؟

خوب نبھے گی ہم دونوں میں میرے جیسا تو بھی ہے
تھوڑا جھوٹا میں بھی ٹھہرا تھوڑا جھوٹا تو بھی ہے

یہ بے کنار بدن کون پار کر پایا
بہے چلے گئے سب لوگ اس روانی میں

کھلی نہ مجھ پہ بھی دیوانگی مری برسوں
مرے جنون کی شہرت ترے بیاں سے ہوئی

دیکھوگے تو آئے گی تمہیں اپنی جفا یاد
خاموش جسے پاؤگے خاموش نہ ہوگا

سنا ہے امن پرستوں کا وہ علاقہ ہے
وہیں شکار کبوتر ہوا تو کیسے ہوا

وہ ایک پل کی رفاقت بھی کیا رفاقت تھی
جو دے گئی ہے مجھے عمر بھر کی تنہائی

نئی زندگی کے نئے مکر و فن
نئے آدمی کی نئی چال ڈھال

بہتا ہوں میں دریا کی روانی سے کہیں دور
اک پیاس مجھے لائی تھی پانی سے کہیں دور

ریل گاڑی کے سفر میں یہ ہوا ہے اکثر
لوگ بیٹھے ہوئے سامان بدل دیتے ہیں

اپنی ہی روانی میں بہتا نظر آتا ہے
یہ شہر بلندی سے دریا نظر آتا ہے

جہاں پہ ڈوب گیا میری آس کا سورج
اسی جگہ وہ ستارہ شناس رہتا ہے

پاپ کرو جی کھول کر دھبوں کی کیا سوچ
جب جی چاہا دھو لیے گنگا جل کے ساتھ

گزر رہا ہوں میں سودا گروں کی بستی سے

بدن پہ دیکھیے کب تک لباس رہتا ہے

کون آتا ہے عیادت کے لیے دیکھیں فراغؔ
اپنے جی کو ذرا ناساز کیے دیتے ہیں

اپنی مجبوری کو ہم دیوار و در کہنے لگے
قید کا ساماں کیا اور اس کو گھر کہنے لگے

نہ جانے کیسا سمندر ہے عشق کا جس میں
کسی کو دیکھا نہیں ڈوب کے ابھرتے ہوئے

سمجھی گئی جو بات ہماری غلط تو کیا
یاں ترجمہ کچھ اور ہے آیت کچھ اور ہے

ہم سے تہذیب کا دامن نہیں چھوڑا جاتا
دشت وحشت میں بھی آداب لیے پھرتے ہیں

تمہارا چہرہ تمہیں ہو بہ ہو دکھاؤں گا
میں آئنہ ہوں، مرا اعتبار تم بھی کرو

دیتے نہیں سجھائی جو دنیا کے خط و خال
آئے ہیں تیرگی میں مگر روشنی سے ہم

آپ دریا کی روانی سے نہ الجھیں ہرگز
تہہ میں اس کے کوئی گرداب بھی ہو سکتا ہے

اور کچھ دن خراب ہو لیجے
سود اپنا ہے اس زیاں میں ابھی

 

Romantic

 

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here